امریکی فوج مستقل طورپر افغانستان میں رہے گی۔ ڈونلڈ ٹرمپ

واشنگٹن (ریپبلکن نیوز) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ طالبان کے ساتھ معاہدے کے باوجود امریکی افواج افغانستان میں ہمیشہ کیلئے رہیں گی اور اگر افغان سرزمین سے دوبارہ امریکہ پر حملہ ہوا تو ہم دوبارہ آئیں گے۔

امریکی ریڈیو کو دیے گئے اپنے ایک انٹرویو کے دوران امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ طالبان سے مذاکرات کے باوجود امریکی افواج افغانستان میں موجود رہیں گی ۔ ’ ہم افغانستان سے مکمل فوجی انخلا نہیں کر رہے بلکہ 8 ہزار 6 سو کے قریب امریکی فوجی مستقل افغانستان میں رہیں گے اور اگر ہمیں پھر افغانستان آنا پڑا تو یہ گزشتہ آمد سے مختلف ہو گی۔‘ اس وقت امریکہ کے 14 ہزار فوجی افغانستان میں موجود ہیں جبکہ نیٹو افواج اس کے علاوہ ہیں۔

امریکی صدر نے واضح کیا کہ افواج اسی صورت کم کی جائیں گی جب طالبان دوبارہ افغان سرزمین امریکہ کے خلاف استعمال نہ ہونے دینے کی گارنٹی دیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر کہا کہ وہ ایک کروڑ لوگوں کو مار کر جنگ نہیں جیتنا چاہتے ۔ امریکی صدر نے افغانستان کو دہشتگردوں کی ہارورڈ یونیورسٹی بھی قرار دیا۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں