بلوچ مظاہرین قابلِ قتل ہیں انہیں پاکستان میں سزائے موت ہونی چایئے

فرانکفرٹ(ریپبلکن نیوز) جرمنی کے شہر فرانکفرٹ میں بلوچ ریپبلکن پارٹی کے مظاہرے کے دوران پنجابیوں اور پاکستانی قونصلیٹ کے اہلکاروں کے درمیان شدید نعرے بازی، قونصلیٹ سے وابستہ لوگوں کو بلوچوں کو قتل کرنے کی دھمکی۔

26 اگست کو دن گیارہ بجے بلوچ ریپبلکن پارٹی کی جانب سے شہیدِ وطن نواب اکبر خان بگٹی کی بہمانہ قتل کے خلاف فرانکفرٹ میں پاکستانی قونصلیٹ کے باہر ایک احتجاجی مظاہرہ کیا، اسی دوران قونصلیٹ کے اہلکاروں اور جرمنی میں مقیم پنجابیوں نے بلوچوں کے خلاف بھی احتجاجی مظاہرہ کیا اوراس طرح بلوچ اور پنجابیوں کے درمیان کئی دیر تک شدید نعرے بازی ہوئیں۔

مظاہرے کے دوران بلوچوں کو قتل کرنے کی دھمکیاں بھی دی گئیں جبکہ ایک پاکستانی شہری نے سوشل میڈیا پر مظاہرے کی ویڈیو اپلوڈ کرتے ہوئے بلوچوں کو بھارتی ایجنٹ قرار دیا اور کہا کہ یہ مظاہرین انڈیا کے خریدے ہوئے ہیں۔

ویڈیو میں مزید کہا گیا کہ پاکستان جو اس وقت ترقی کی راہ پر گامزن ہے کے خلاف بلوچ نوجوان نعرے لگا رہے ہیں، ان لوگوں کو ابھی یاد آیا ہے، پاکستان کے خلاف مظاہرہ کر رہے ہیں پاکستان کو بدنام کر رہے ہیں۔

مزید کہا گیا کہ بلوچ مظاہرین مودی کے دوست ہیں پاکستان کے غدار ہیں، یہ قابلِ قتل ہیں انکو پاکستان کے اندر سزائے موت دینے چایئے”۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں