بگٹی قبائل کے خواتین کوگرفتار اور لاپتہ کرنے کی بھرپور مزمت کرتے ہیں، وومن ڈیموکریٹک فرنٹ

پ ر (ریپبلکن نیوز) وومن ڈیموکریٹک فرنٹ بلوچستان کے صوبائی رہنماوں نے ایک مشترکہ بیان میں گزشتہ روز جعفر آباد سے علاج کے غرض سے آنے والی بگٹی قبائل کے تین خواتین بمعہ بچوں سمیت کو ہزارگنجی سے گرفتار اور لاپتہ کرنے کی بھرپور مزمت کی ہے۔

فرنٹ کے صدر جلیلہ حیدر کا کہنا ہے کہ حالیہ دنوں خواتین کے ساتھ ریاستی رویہ نہ صرف توہین آمیز ہے بلکہ یہ خطے میں رہنے والی خواتین کی حرمت پر بھی ایک حملہ ہے۔ ماضی میں کھبی ایسا مثال نظروں سے نہیں گزرا کہ ریاستی ننگا جبر اسطرح سے بے نقاب ہو ، جیسا کہ حالیہ حکومت کے دور میں نظر آئی ہے۔ 

فرنٹ کے رہنماوں نے خواتین کے گرفتاری بارے اپنے تشویش اور پریشانی کا اظہار کرتےہوئے یہ مطالبہ کیا کہ ہزارگنجی سے گرفتار بلوچ خواتین کو نہ صرف بازیاب کرایا جائے بلکہ انکے خلاف ناروا سلوک کرنے والی اداروں کے اہلکار کے خلاف بھی جنگی جرائم میں ملوث ہونے پر کاروائی کی جائے۔ فرنٹ کے جنرل سیکٹری فرخندہ اسلم نے کہا کہ اگر خواتین کے ساتھ یہ ناروا سلوک بند نہیں کیا گیا تو ہم مجبور ہے کہ روڑ پر آکر اپنے احتجاج ریکارڈ کروائے۔ فرخندہ اسلم نے مطالبہ کیا کہ خواتین کو فی الفور بازیاب کرایا جائے۔

مزید خبریں اسی بارے میں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں