پاکستانی فوج اوربلوچ سرمچاروں میں خونریز جھڑپیں، فوجی اپنے بندوقیں چھوڑ کرفرار

ڈیرہ بگٹی (ریپبلکن نیوز) ڈیرہ بگٹی میں فوجی  آپریشن میں مصروف پاکستانی فورسز پر بلوچ سرمچاروں کے شدید حملے۔

آمدہ اطلاعت کے مطابق آج علی الصبح پاکستانی فوج کے بھاری نفری نے ڈیرہ بگٹی اور کوہلو کے سرحدی علاقوں بوبی، شنک اور بمبور میں زمینی آپریشن کا آغاز کیا اور بڑی تعداد میں لوگوں کے گھروں کو نظر آتش کرنا شروع کردیا اسی دوران چار مقامات پر پہلے سے گھات لگا کر بیٹھے بلوچ مزاحمت کاروں نے پاکستانی افواج پر راکٹوں اور بھاری ہتھیاروں سے حملہ کیا۔  کئی گھنٹوں سے فورسز اور بلوچ سرمچاروں کے درمیان خون ریز جھڑیں ہوئیں۔

اطلاعتات کے مطابق ان جھڑپوں کے دوران پاکستانی فوج کے ایک اعلٰی افسر سمیت کئی اہلکار ہلاک ہوگئے جبکہ مقامی موڈا گروپ کے بارے میں بھی ہلاکتوں کی اطلاعتات ہیں۔  شدید جھڑپوں کے بعد فورسز کے اہلکار اپنے متعدد بندوقیں اور دیگر اشیاء جنگ کے میدان میں چھوڑ کر بھاگ گئے

علاقائی زرائع کے مطابق فورسز کے واپس جانے والے اہلکاروں پر بھی بوبی کے مقام پر گھات لگا کر حملہ کیا گیا جس میں بڑی تعداد میں اہلکاروں کے ہلاکت کی خبریں ہیں۔ ڈیرہ بگٹی سے لیویز زرائع نے ریپبلکن نیوز کو بتایا کہ ڈیرہ بگٹی ہسپتال میں آٹھ اہلکاروں کی لاشیں جبکہ متعدد زخمیوں کو بھی لایا گیا ہے جس کے بعد ہسپتال کا کنٹرول ایف سے نے خود سنبھال لیا ہے۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں