کابل: بم دھماکے میں سو زخمی

نیوز ڈیسک (ریپبلکن نیوز ) افغان دارالحکومت کابل میں بدھ کی صبح ہوئے ایک طاقتور کار بم دھماکے کے نتیجے میں پچانوے افراد زخمی ہو گئے ہیں۔ طالبان جنگجوؤں نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز نے افغان حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ بدھ کی صبح کابل میں واقع ایک پولیس اسٹیشن کے نزدیک ایک کار بم حملہ کیا گیا، جس کے نتیجے میں کم ازکم  پچانوے افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

افغان وزارت داخلہ نے بھی اس پرتشدد کارروائی کی تصدیق کر دی ہے لیکن ہلاکتوں کے بارے میں کوئی معلومات فراہم نہیں کی گئی ہیں۔ خدشہ ہے کہ اس طاقتور بم حملے کے نتیجے میں متعدد افراد ہلاک ہو سکتے ہیں۔

مقامی میڈیا کے مطابق مغربی کابل کے مصروف علاقے میں ہوئے اس بم دھماکے کے بعد شہر سیاہ دھوئیں میں لپٹ گیا۔ بتایا گیا ہے کہ امدادی کاموں کا سلسلہ شروع کر دیا گیا ہے اور جائے وقوعہ پر سکیورٹی اہلکار پہنچ گئے ہیں۔

دوسری طرف طالبان باغیوں نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ ان کے ایک خود کش حملہ آور نے ایک بھرتی سینٹر کو نشانہ بنایا ہے۔ اس بیان کے مطابق، ”اس حملے میں فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی ایک بڑی تعداد ہلاک ہو گئی ہے۔‘‘ تاہم آزاد ذرائع سے جنگجوؤں کے اس بیان کی تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔

وزارت داخلہ کے ترجمان نصرت رحیمی نے میڈیا سے گفتگو میں کہا کہ یہ کار بم دھماکا اس وقت ہوا، جب ایک چیک پوائنٹ پر سکیورٹی اہلکاروں نے ایک گاڑی کو تلاشی کے لیے روکا۔ انہوں نے کہا کہ یہ گاڑی پولیس تھانے میں داخل نہیں ہو سکی تھی۔ وزارت صحت کے مطابق پچانوے افراد کو طبی امداد دی جا ری ہے، جن میں زیادہ تر عام شہری ہیں۔ ان زخمیوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

مزید خبریں اسی بارے میں

Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں