بلوچستان

  • Photo of ڈیرہ بگٹی میں قائم واحد گرلز کالج کے واش رومز میں کیمرے نصب

    ڈیرہ بگٹی میں قائم واحد گرلز کالج کے واش رومز میں کیمرے نصب

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی کے تحصیل سوئی کے واحد گرلز کالج کے واش رومز میں کیمرے…

    مزید پڑھیں
  • Photo of صحبت پور: آگ لگنے سے متعدد گھر جل کر خاکستر، متاثرین سخت سردی میں پریشان

    صحبت پور: آگ لگنے سے متعدد گھر جل کر خاکستر، متاثرین سخت سردی میں پریشان

    صحبت پور/رپورٹ محمد فاروق بھنگر(ریپبلکن نیوز) صحب پور میں متعدد گھر جل کر خاکستر ہوگئے۔ تفصیلات کے مطابق ضلع صحبت…

    مزید پڑھیں
  • Photo of کوئٹہ: سی ٹی ڈی کا نواں کلی میں دو مشتبہ افراد کو ہلاک کرنے کا دعوع

    کوئٹہ: سی ٹی ڈی کا نواں کلی میں دو مشتبہ افراد کو ہلاک کرنے کا دعوع

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان کے صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں کانٹر ٹیررازم ڈیمارٹمنٹ (سی ٹی ڈی) نے دو مبینہ مشتبہ افراد…

    مزید پڑھیں
  • Photo of وفاق نے قدرتی آفات میں بلوچستان کو اکیلا چھوڑ دیا، وزیر اعلیٰ کا شکوہ

    وفاق نے قدرتی آفات میں بلوچستان کو اکیلا چھوڑ دیا، وزیر اعلیٰ کا شکوہ

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال خان آلیانی نے صوبے میں شدید برفباری کے بعد ریسکیو اور ریلیف آپریشن…

    مزید پڑھیں
  • Photo of 7 سالوں سے لاپتہ کوئٹہ کا رہائشی شخص بازیاب ہوگیا

    7 سالوں سے لاپتہ کوئٹہ کا رہائشی شخص بازیاب ہوگیا

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان کے مختلف علاقوں سے جبری طورپر لاپتہ بلوچوں کی بازیابی کا سلسلہ جاری، سات سال لاپتہ…

    مزید پڑھیں
  • Photo of ڈیرہ بگٹی: سرکاری حمایت آفتہ گروہ نے بم دھماکے میں ایک شخص کو ہلاک کردیا

    ڈیرہ بگٹی: سرکاری حمایت آفتہ گروہ نے بم دھماکے میں ایک شخص کو ہلاک کردیا

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان کے ضلع ڈیرہ بگٹی میں دھماکہ، ایک شخص جاں بحق تفصیلات کے مطابق ڈیرہ بگٹی کے…

    مزید پڑھیں
  • Photo of ڈیرہ بگٹی: فائرنگ کے تبادلے میں دو افراد ہلاک

    ڈیرہ بگٹی: فائرنگ کے تبادلے میں دو افراد ہلاک

    ڈیرہ بگٹی (ریپبلکن نیوز) سوئی میں قبائلی جھگڑوں کے باعث دو افراد ہلاک۔ تفصیلات کے مطابق ضلع ڈیرہ بگٹی کی…

    مزید پڑھیں
  • Photo of چار ووٹوں کے بدلے اگر لاپتہ افراد بازیاب ہو جائیں تو گھاٹے کا سودا نہیں: آغا حسن بلوچ

    چار ووٹوں کے بدلے اگر لاپتہ افراد بازیاب ہو جائیں تو گھاٹے کا سودا نہیں: آغا حسن بلوچ

    کوئٹہ (ریپبلکن نیوز) بلوچستان نیشنل پارٹی کے مرکزی سیکرٹری اطلاعات رکن قومی اسمبلی آغا حسن بلوچ ایڈووکیٹ نے کہا ہے…

    مزید پڑھیں
  • Photo of مشترکہ جدوجہد ہی میں بلوچ اور سندھیوں کا نجات ممکن ہے۔ چیئرمین خلیل بلوچ

    مشترکہ جدوجہد ہی میں بلوچ اور سندھیوں کا نجات ممکن ہے۔ چیئرمین خلیل بلوچ

    پ ر (ریپبلکن نیوز) بلوچ نیشنل موومنٹ کے چیئرمین خلیل بلوچ نے ممتاز سندھی قوم پرست رہنما جی ایم سید کے ایک سو سولویں یوم پیدائش کے موقع پر اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ جی ایم سید کے سندھودیش کے تحریک آزادی کے لئے خدمات ناقابل فراموش ہیں۔ وہ جدید سندھی نیشنلزم کے بانی ہیں۔ آج سندھی قوم ان کے فکر و فلسفے پرعمل پیرا ہوکرپاکستان کے خلاف برسرپیکار ہیں۔ چیئرمین خلیل بلوچ نے کہا کہ جی ایم سید سیاستدانوں کے اس قبیل سے تعلق رکھتے تھے جومظلوم قوموں کے روشن و باوقار مستقبل اور وسیع ترمفاد کے لئے واضح موقف کے ساتھ سامنے آئے۔ وہ اپنے عظیم کردار سے زندگی میں قومی رہنمائی کا فریضہ انجام دیتے رہے۔ ان کی وفات کے بعد بھی ان کا فکر و فلسفہ اورنظریات رہنمائی کافریضہ انجام دے رہے ہیں۔ بلا شبہ سائیں جی ایم سید ایک اعلیٰ پایہ کے سیاستدان اور قوم پرست لیڈر ہونے کے ساتھ ساتھ ایک مدبر اوراعلیٰ پایہ کے دانشور تھے۔ ممتاز قوم پرست رہنما جی ایم سید اپنے ہمعصر رہنماؤں میں علمی خدمات کی وجہ سے ممتاز نظر آتے ہیں۔ سائیں نہ صرف ممتاز سیاستدان اور عملی رہنما تھے بلکہ ان کے علمیخدمات اس خطے کے کسی بھی لیڈر سے ہمیں زیادہ نظر آتے ہیں۔ سیاست کے علاوہ صوفی ازم، شاعری، تاریخ، اسلامی فلسفہ، عمرانیات اور ثقافت جیسے موضوعات پر انہیں نہ صرف کافی دسترس حاصل تھا بلکہ انہوں نے پچاس سے زائد سے کتاب بھی تصنیف کئے۔ انہوں نے کہا کہ عموماَکہا جاتاہے کہ سائیں جی ایم سید عدم تشددکا علمبردار تھا لیکن ان کے تعلیمات واضح کرتے ہیں کہ ان کا یہ فلسفہ وسیع تناظر میں تھا جس کے ذریعے وہ آپسی تعلقات،برادراقوام اورعالمی امن کا خواب دیکھتے تھے لیکن انہوں ایک سے زائد مرتبہ واضح کیاتھا کہ پاکستان کے خلاف انقلابی تشددوقت کی عین ضرورت ہے۔ چیئرمین خلیل بلوچ نے کہا کہ سائیں جی ایم سید کی سیاست زندگی کا آغاز قیام پاکستان سے بہت پہلے شروع ہوجاتا ہے۔ انہوں نے 1930ء کو اپنی عملی سیاسی زندگی کا آغاز سندھ ہاری کمیٹی کی تشکیل سے کیا۔ اس کے بعد انہوں نے بزم صوفی سندھ، سندھ یونائیٹڈ فرنٹ، جئے سندھ محاذ پارٹیاں بنائیں۔ وہ مختلف نشیب وفراز سے گزرے لیکنان کی سیاست کا مرکز و محور سندھ اور سندھودیش ہی رہا۔ البتہ یہ بھی تاریخ کا جبر ہے کہ سائیں جیسے زیرک انسان پاکستان کی تخلیق کے عمل میں بھی شریک رہے لیکن پاکستان نے اپنے اس محسن کوبھی نہیں بخشا۔ جب سائیں نے یہ ادراک کیا کہ قیام پاکستان کے اصل مقاصد وہ نہیں جو  بیان کئے گئے تھے بلکہ یہ ایک سامراجی ملک ہےجس کی اقتداراعلیٰ پنجاب اور پنجابی فوج کے ہاتھ میں ہے۔ یہ ریاست دیگر قوموں کی زمین،تشخص، تہذیب و ثقافت اور وسائل کو ہڑپنے کے لئے وجود میں لایا جاچکا ہے۔ پاکستان قوموں کی وجود کے لئے زہرِقاتل ہے۔ وہ جان چکے تھے کہ اگر اس کے خلاف بروقت جدوجہد کا آغاز نہ کیا تو ہماری بقا اورتشخص ہمیشہ کے لئے مٹ جائے گی۔ اسکے بعد سائیں جی ایم سید نے کبھی مڑکر  پیچھے نہیں دیکھا اورپوری زندگی سندھو دیش کی آزادی کی جدوجہد کے لئے وقف کردی۔ انہوں نے کہا کہ سندھودیش اور بلوچستان ایک غیر فطری ریاست کے زیر قبضہ ہیں۔ ہماری قومی بقا اور تشخص خطرے سے دوچارہے۔ سندھ اپنی تہذیبی قدامت اورسندھی سماج اپنے سیکولر روایات، صوفی ازم اور پرامن فکر و فلسفے کی بدولت ہمیشہ خطے میں ممتاز حیثیت کاحامل رہاہے۔ غلامی کے اندھیروں میں بلوچ قوم کی طرح سندھبھی اپنی تہذیب و روایات اور اپنی سرزمین سے محروم ہوتا جارہا ہے کیونکہ پاکستانی ریاست یہ تہیہ کرچکاہے زیر قبضہ تمام قوموں کے تاریخی تشخص کو مٹا کر انہیں ماضی  کے تاریخی و تہذیبی وراثت سے بیگانہ کیا جائے۔ جب قومیں اپنے ماضی سے کٹ جاتے ہیں تو ان میں مزاحمت کی قوت باقی نہیں رہتی ہے۔ ہمیں یہ فخر حاصل ہے کہ بلوچاورسندھی اس غیر فطری ریاست اور دشمن کے خلاف برسرپیکار ہیں۔ بی این ایم چیئرمین نے کہا کہ پاکستان ایک غیر فطری ملک ہے جو کسی بھی ریاست کے ضروری بنیادوں سے محروم اور نام نہاد مذہبی نظریے پر مغربی طاقتوں نے اپنی مستقبل کے مفادات کے لئے وجو د میں لایاہے۔ جبکہ بلوچ، سندھی اور پشتون ہزارہا سالہ تاریخ اور تہذیب کے مالک ہیں لیکن پاکستان کی مزید غلامی سے ہماری قومی بقاءشدید خطرات سے دوچار ہے۔ ہمیں اپنی اپنی قومی سرزمینوں پر اقلیت میں تبدیل کرنے کی سازشیں ہورہی ہیں۔ آج بلوچ قوم جس صورت حال سے دوچار ہے، سندھیوں کو بھی ایسی ہی سنگین نسل کشی اور استحصال کا سامنا ہے۔ لیکن زندہ قوموں کی تاریخ یہی بتاتی ہے کہ انہیں زیادہ دیر تک غلام اور زیر نگوں بناکر نہیں رکھا جاسکتا ہے اوران میں مزاحمت کی قوت ہمیشہ باقی رہتاہے۔ بلوچ نیشنل موومنٹ کے چیئرمین خلیل بلوچ نے کہا ہم بارہا کہہ چکے ہیں کہ مشترکہ جدوجہد ہی میں بلوچ اور سندھیوں کا نجات ممکن ہے کیونکہ ہمیں مشترکہ دشمن کا سامنا ہے۔ پاکستان صرف بلوچ، سندھی اور پختونوں کا دشمن نہیں بلکہ عالم انسانیت کا دشمن ہے۔ اس درندہ ریاست کی شر سے کوئی بھی محفوظ نہیں۔ پاکستان اپنے سامراجیاتحادیوں کے ساتھ بلوچ، سندھی اور دیگر مظلوم اقوام کی نسل کشی میں مصروف ہے۔ لوٹ مار اور استحصال اپنے عروج پرہے۔ روز ہماری عزت اور آبرو کو ملیامیٹ کیا جارہا ہے۔ اب وقت آچکا ہے کہ سندھی اور بلوچ مشترکہ محاذ کی جانب بڑھیں اورمشترکہ دشمن کو شکست دے کر اپنی اپنی قومی آزادی کی حصول کو یقینی بنائیں۔

    مزید پڑھیں
  • Photo of مذاکرات کامیاب، بی این پی کا حکومت کی حمایت جاری رکھنے کا فیصلہ

    مذاکرات کامیاب، بی این پی کا حکومت کی حمایت جاری رکھنے کا فیصلہ

    اسلام آباد(ریپبلکن نیوز)  حکومتی وفد اور بلوچستان نیشنل پارٹی (مینگل) کے درمیان مذاکرات کامیاب ہوگئے، بی این پی مینگل نے…

    مزید پڑھیں
Back to top button
error: پوسٹ کو شیئر کریں